اردوئے معلیٰ

 

وہ حبیبِ رب شہ دو سرا​

وہ شعور و فکر کی آگہی​

وہی نور حق وہی شمع جاں​

وہ ہی کائنات کی روشنی​

 

وہ دیار جود و سخا کہو​

وہ مدینہ شہر وفا کہو​

تمہیں کیا بتاؤں کہ اس جگہ​

جو کہی ہے میں نے، سنی گئی​

 

کبھی اہل عشق میں چھڑ گیا​

جو بیانِ سیرت مصطفٰی​

مجھے یوں لگا کوئی روشنی​

میرے قلب و جاں میں اتر گئی​

 

بجز ان کے ہے کوئی اور بھی​

جو ہو جلوہ گر سرِ لا مکاں​

نہ ملائکہ کا گزر جہاں​

نہ پہنچ سکا کوئی آدمی​

 

نہ وہ صبح ہے نہ وہ شام ہے​

یہ انہی کا فیض دوام ہے​

میرے الجھے کام سلجھ گئے​

میری بگڑی بات سنور گئی​

 

فقط آنسوؤں کے سوا کہاں​

میرے پاس حسنِ عمل کوئی​

یہ شکیل فیض ہے نعت کا​

میری بات پھر بھی بنی رہی​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات