اردوئے معلیٰ

وہ حسنِ مکمل، پیکرِ الفت، خلقِ مجسم کیا کہئے

وہ حسنِ مکمل، پیکرِ الفت، خلقِ مجسم کیا کہئے

محبوبِ خدا مطلوبِ جہاں وہ ذاتِ مکرم کیا کہئے

 

وہ صورتِ انور صلِّ علیٰ وہ گیسوئے پر خم کیا کہئے

اک صبحِ درخشاں کا منظر اک شام کا عالم کیا کہئے

 

افلاک پہ غلماں حور و ملک اور فرش پہ آدم کیا کہئے

مصروفِ ثنا سب رہتے ہیں سُکّانِ دو عالم کیا کہئے

 

سرتاجِ نبوت، ختمِ رسل یا ہادی اعظم کیا کہئے

القاب سبھی تو پیارے ہیں حیراں ہوں مقدم کیا کہئے

 

شاہانِ عرب خاقانِ عجم دارا و کَے و جم کیا کہئے

ہوں روضۂ اقدس پر حاضر سر اپنا کئے خم کیا کہئے

 

بیداری شب در پیشی رب وہ سجدۂ پیہم کیا کہئے

امت کے لئے بخشش کی دعا با دیدۂ پُر نم کیا کہئے

 

بھرپور خزینہ حکمت کا اور نورِ ہدایت کا چشمہ

اترا ہے صحیفہ جو ان پر قرآنِ معظم کیا کہئے

 

اس شمع کے سارے پروانے توحید کے سارے دیوانے

سب شہرِ مدینہ میں آ کر مل بیٹھے ہیں باہم کیا کہئے

 

اتنی تو خبر ہے آپ گئے در جلوہ گہِ یزداں لیکن

کیا بندۂ و رب میں بات ہوئی یہ واللہ اعلم کیا کہئے

 

گنجینۂ حکمت، منبعِ حق سرچشمۂ علمِ بے پایاں

آگاہِ رموزِ سر بستہ وہ عرش کا محرم کیا کہئے

 

تم ختمِ نبوت صلِّ علیٰ ہم آخرِ امت ہیں واللہ

تا حشر تمہیں تم کیا کہنا تا حشر ہمیں ہم کیا کہئے

 

محشر میں نظرؔ پر چشمِ کرم اے شافعِ محشر فرمائیں

اعمال کی پرسش ہو جس دم کیا حال ہو اس دم کیا کہئے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ