وہ رشکِ صد ستارہ ہے ، نبئ اول و آخِر

وہ رشکِ صد ستارہ ہے ، نبئ اول و آخِر

جو طلعت جُو تمھارا ہے ، نبئ اول و آخِر

 

جہاں کے خام کاروں کا ، زماں کے شرم ساروں کا

ترے در پر گزارا ہے ، نبئ اول و آخِر

 

اُسے کیا خوفِ رسوائی ، اُسے کیا حُزنِ تنہائی

جسے تیرا سہارا ہے ، نبئ اول و آخِر

 

تجھے وہ سب سناؤں کیا ، وہ تجھ سے سب چھپاؤں کیا

جو تجھ پر آشکارا ہے ، نبئ اول و آخِر

 

تری اولاد سے اُلفت ، ترے اصحاب سے نسبت

کرم کا استعارہ ہے ، نبئ اول و آخِر

 

مری آرائشِ دُنیا ، مری آسائشِ عقبیٰ

تری بخشش کا دھارا ہے ، نبئ اول و آخِر

 

ترا دربارِ رحمت زا ، ترا شہرِ کرم افزا

عنایت کا منارہ ہے ، نبئ اول و آخِر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ