اردوئے معلیٰ

Search

وہ زُلف عنبریں وہ سراپا خیال میں

رہتا ہے شاہِ دین کا چہرہ خیال میں

 

ترقیمِ نعتِ شاہِ دو عالم کے واسطے

لازم رہے حضور کا اسوہ خیال میں

 

دل میں سما گئیں ہیں مدینے کی رونقیں

رہتا ہے ہر گھڑی مرے روضہ خیال میں

 

آنکھوں میں بس گئی ہے جو صورت حضور کی

دِکھتا ہے چار سُو مجھے جلوہ خیال میں

 

خوشبو نے رگِ جان میں خیمے لگا لیے

جب آ گیا ہے ان کا پسینہ خیال میں

 

محبوبِِ دو جہاں تھے مدینے میں جلوہ گر

وہ آ گیا ہے میرے زمانہ خیال میں

 

جس خوش نصیب راہ سے گزرے تھے شاہِ دیں

چوما ہے ناز نے بھی وہ رستہ خیال میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ