اردوئے معلیٰ

وہ سرورِ کونین وہ اللہ کے محبوب

اے صلِّ علیٰ خوب ہے واللہ بہت خوب

 

پھیرا رخِ انور طرفِ قبلۂ مرغوب

راضی ہے خدا بھی بہ رضائے دلِ محبوب

 

یوں صاف کروں روضۂ اقدس کو تو کیا خوب

ہو شوق کے ہاتھوں میں مرے پلکوں کی جاروب

 

غالب ہیں وہ دنیا میں وہ خورسند بہ عقبیٰ

سرکار کی الفت سے جو دل ہو گئے مغلوب

 

وہ ختمِ رسل ہیں جسے تسلیم نہیں یہ

وہ راندۂ درگاہِ خداوند وہ مغضوب

 

پردہ شبِ اسرا کا جو سرکاؤ تو دیکھو

یک جا ہیں سرِ عرشِ بریں طالب و مطلوب

 

یا رب ہو عطا شربتِ دیدارِ محمد

دے یا کہ نہ دے چشمۂ تسنیم کا مشروب

 

دل شاد ہوئے سن کے سرِ بزم سبھی لوگ

تم نے یہ سنائی جو نظرؔ نعتِ خوش اسلوب

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات