اردوئے معلیٰ

Search

وہ لوگ جن سے نہیں ہے مکالمہ میرا

وہی تو کرنے چلے ہیں مقابلہ میرا

 

تُو اپنی دنیا اٹھا اور اک طرف ہو جا

کہ اب خدا سے ہی ہوگا معاملہ میرا

 

کسی بھی عشق کے مضموں کو کیا کروں پڑھ کر

مرے تو ہاتھ پہ رکھا ہے تجربہ میرا

 

ادھورے عکس دکھاتا ہے ایک مدت سے

کہ بدگمان ہوا مجھ سے آئینہ میرا

 

میں ایسے ٹوٹ کے ذروں میں بٹ گیا ہوں دوست

ہوا نہ خود سے تیرے بعد رابطہ میرا

 

میں تیرے فیضِ محبت سے مستجاب ہوا

کھڑا ہے اب بھی مگر رہ میں مسئلہ میرا

 

بھٹکنے کے لئے چھوڑا ہے دشت میں قیصر

سمندروں نے بتایا نہ راستہ میرا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ