اردوئے معلیٰ

Search

وہ منزلِ حیات ہے وہ جانِ انقلاب

نورِ شعور بھی وہی وہ ہی مرا نصاب

 

عشقِ حضور کے بنا بے لطف زندگی

سب رونقیں فضول ہیں ہر دلکشی عذاب

 

خطبات عالیہ ترے منشورِ آگہی

رشکِ بہار لہجہ ہر اک لفظ ہے گلاب

 

پتھر سرشت لوگوں کے لہجوں کی تلخیاں

کب لاسکیں کبھی تری ہمت میں اضطراب

 

دانشوری یہی ہے کہ ہر موڑ پہ سدا

سیرت کی روشنی سے ہی کرنا ہے اکتساب

 

تیری نگاہِ پاک سے جن کو ملا عروج

وہ منزلِ یقین کے رہبر تھے لاجواب

 

پتھر درخت جانور دنیائے انس و جاں

تیرے کرم کا سب پہ برستا رہا سحاب

 

ہم لوگ اس قدر ہیں حیا سے شکیلؔ دور

سیرت کا نور کررہا ہے ہم سے اب حجاب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ