اردوئے معلیٰ

Search

وہ مُبتدا کہ مرکزی نقطہ حیات کا

وہ مُنتہا کہ ختمِ رسل کائنات کا

 

تجسیم جس کی علّتِ تخلیق روزگار

باعث ہے جس کا نام سبھی ممکنات کا

 

ہر بات جس کی ایک سماوی کتاب ہے

ہر لفظ اک صحیفۂ دِل جس کی بات کا

 

مذکور جس کا نام ہر اک انجمن میں ہے

موضوعِ دلپذیر ہے جو شش جہات کا

 

جس کے غلام بوذر و سلمان فارسی

سب میں حَسین عکس ہے مولا کی ذات کا

 

فاروق و مرتضیٰ کی وہ ہیبت کہ الحفیظ

دل ڈوب ڈوب جائے تھا باطل صفات کا

 

جب غزنوی نے پایا جنم ماں کی کوکھ سے

پِتاّ پگَھل کے پانی ہُوا سومنات کا

 

جس کے لطیف اشارے سے چشمے اُبل پڑیں

تھا بند اس کی آل پہ پانی فرات کا

 

بندوں کو جس نے کر دیا ہمدوشِ خواجگاں

قائل تھا جو نسَب نہ کسی ذات پات کا

 

دیوار و در سے صبحِ تعقل ہوئی طلوع

جب آگہی کے شہر میں منظر تھا رات کا

 

پتھر بھی جس کے ہاتھ میں مصروفِ حمد ہیں

تسبیح جس کی کرتا ہے عالم نبات کا

 

اب تک ضمیر سنگ میں ضربِ شکست ہے

پِندار چکنا چُور ہے لات و منات کا

 

ممکن نہیں کہ ہو سکے حق نعت کا ادا

زمزم سے بھی اگر میں لُوں پانی دوات کا

 

ثقفِ سما پہ نعت ہے اس کی لکھی ہوئی

رتبہ کہاں ہے اتنا مرے کاغذات کا

 

انورؔ کہاں ثنائے محمد مری مجال

بس ڈھونڈتا ہوں میں تو ذریعہ نجات کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ