اردوئے معلیٰ

وہ چشمِ نم وہ قلب وہ سوزِ جگر کہاں

چلنے کو راہِ عشق میں رختِ سفر کہاں

 

خالی صدف ہے نقدِ متاعِ گہر کہاں

آنکھیں ہی رہ گئی ہیں حیائے نظر کہاں

 

بچتا ہے سنگ و خشت کی زد سے یہ سر کہاں

یہ کوئے عاشقی ہے تم آئے ادھر کہاں

 

وہ گل وہ گلستاں وہ بہاریں وہ نغمگی

پہلی سی وہ لطافتِ شام و سحر کہاں

 

سب بوالہوس ہیں حُسن رہے اب حجاب میں

سوءِ نظر تو عام ہے حُسنِ نظر کہاں

 

اس دورِ پُر فتن میں نہیں دل سے دل کو راہ

ہم جنس ہیں پر اُنس ہے باہم دگر کہاں

 

کب سے ہوں جستجو میں پہ ملتا نہیں سراغ

گم ہو کے رہ گئی ہے مری رہ گزر کہاں

 

اس آستاں پہ بیٹھ گئے ہم تو اے نظرؔ

ہم کو نہیں دماغ پھریں در بدر کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات