وہ کیا ایک ہے ذاتِ پروردگار​

وہ کیا ایک ہے ذاتِ پروردگار​

فقط بے شماری ہے جس کا شمار​

 

وہ کیا ایک خالق ہے نامِ خدا​

نہیں جس کا ثانی کوئی دوسرا​

 

وہ کیا ایک رازق ہے روزی رساں​

کہ ہے جس کا محتاج سارا جہاں​

 

وہ کیا ایک قادر ہے ربِ قدیر​

خبر گیرِ حالِ صغیر و کبیر​

 

وہ کیا ذات ہے حضرتِ پاک ذات​

کہ ہیں ذات سے جس کے ظاہر صفات​

 

بہر جا و ہر ملک و شہر و دیار​

پرستش کے لائق ہے وہ کردگار​

 

بہر ابتدا ہے وہی ابتدا​

وہی ہے بہر انتہا انتہا​

 

وہ ہر ایک صورت میں موجود ہے​

وہ ہر ایک ملت کا معبود ہے​

 

وہ ہر ایک کو رزق دلواتا ہے​

لکھا اُس کی قسمت کا پہنچاتا ہے​

 

کسی کو بھی خالی نہیں چھوڑتا​

رخ اپنا کسی سے نہیں موڑتا​

 

جو ہیں جن و انسان و وحش و طیور​

بد و نیک، خورد و کلاں، مار و مور​

 

اُسی ایک سے پرورش پاتے ہیں​

اُسی ایک کے بندے کہلاتے ہیں​

 

وہ ہے سب کی مشکل کا مشکل کشا​

وہ ہے سب کی حاجت کا حاجت روا​

 

بندھا ذاتِ واحد پہ جس کا یقیں​

دوئی اُس کے پھر دل میں رہتی نہیں​

 

خبر گیرِ عالم، خدائے کریم​

خداوندِ رحماں، غفور الرحیم​

 

اُسی سے ہے روشن چراغِ جہاں​

اُسی سے ہے سرسبز باغِ جہاں​

 

بہ تعریف و توصیفِ پروردگار​

بہ تشریحِ ذاتِ خداوندگار​

 

کرے کیا بیاں ہندیِؔ کم زباں​

کہ ہے طول توحید کی داستاں​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

یہاں بھی تو وہاں بھی تو زمیں تیری فلک تیرا
میں مسافر ہوں رہنما تُو ہے
تجھ کو روا تکبّر ، تجھ کو ہی کبریائی
نگاہ عشق نے در آگہی کا وا دیکھا
ادب سے سر جھکا، بیٹھے ہوئے ہیں
مرا خدا رؤف ہے، مرا خدا رحیم ہے
بہت ارفع مقامِ زندگانی ہے
حرم کو جانے والو جا کے واں رب کو منالو
خدایا دے مجھے اپنا پتہ، پہچان دے دے
خدا کا ذکر میری زندگی ہے