اردوئے معلیٰ

Search

وہ ہی بے لوث ہے جو آپ کی نسبت سے ملا

ورنہ ہر شخص یہاں اپنی ضرورت سے ملا

 

منتظر بیٹھے ہیں اُس خواب کے دروازے پر

دل کو جو ان کی تمنائے زیارت سے ملا

 

جب اُبھارے گئے امکان پہ ہستی کے خطوط

حسن مخلوق کو سب آپکی صورت سے ملا

 

عظمتِ راہبری عقل پہ کھل جائے گی

ان کے منصب کو رسولوں کی امامت سے ،مِلا

 

آپکی بزم سے دشمن بھی جب اک بار اٹھا

پھر وہ جس سے بھی ملا پوری محبت سے ملا

 

دین کو گویا ہر اک جذبے پہ فوقیت ہے

یہ سبق بھی ہمیں سرکار کی ہجرت سے ملا

 

رمز اک اسمِ محمد میں ہے یہ بھی پنہاں

ایک بھی حرف نہیں نام کا علّت سے مِلا

 

درِ عرفان درِ پاک پہ وا ہوتا ہے

اُس نگر جا کے کبھی ہاتھ حقیقت سے ملا

 

اس کی نکہت سے جہانوں میں مہک پھیلی ہے

پھول جو ہم کو چمن ہائے رسالت سے ملا

 

اس سے آباد ہیں ایمان کے سارے عالم

عقل کو جتنا خزانہ تری سنت سے ملا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ