اردوئے معلیٰ

ویسے میں ہر حلیف سے محروم تو ہوا

کس کس کی زد پہ ہوں مجھے معلوم تو ہوا

 

کھوئے ہوئے کھلونے کی انتھک تلاش میں

دنیا سے آشنا کوئی معصوم تو ہوا

 

بکھرا ہوا تھا میرا فسانہ مری طرح

اشعار کے بہانے سے منظوم تو ہوا

 

لکھا گیا ہوں گرچہ خسارے کے باب میں

لیکن تری کتاب میں مرقوم تو ہوا

 

پھر سے ترے خیال کی اک روشنی ملی

زندہ ذرا سا خامۂ مرحوم تو ہوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات