اردوئے معلیٰ

ٹھہرنا بھی مرا جانا شمار ہونے لگا

پڑے پڑے میں پرانا شمار ہونے لگا

 

بہت سے سانپ تھے اس غار کے دہانے پر

دل اس لئے بھی خزانہ شمار ہونے لگا

 

ہجوم سارا رہا کر دیا گیا لیکن

مرا ہی شور مچانا شمار ہونے لگا

 

پھر ایسے ہاتھ سے مانوس ہو گئی تسبیح

گنے بغیر بھی دانہ شمار ہونے لگا

 

وہ سنگ جس کو حقارت سے رات بھر دیکھا

سحر ہوئ تو سرھانا شمار ہونے لگا

 

بھلا ہو انکا جو مجھکو ترا سمجھتے ہیں

مرا بھی کوئی ٹھکانہ شمار ہونے لگا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ