اردوئے معلیٰ

Search

ٹھہری ہوئی آنکھوں میں جدائی کی گھڑی ہے

شب آخری طیبہ کی مرے سر پہ کھڑی ہے

 

اِک ساعتِ بیدار ہے مقسوم نظر کا

دوری میں تڑپنے کے لیے عمر پڑی ہے

 

اِک لمحہ پراں ہے میسر دمِ رُخصت

فہرست دُعاؤں کی سلاموں کی بڑی ہے

 

کیا عرض و گزارش ہو کہ ملتے نہیں الفاظ؟

دُنیائے تمنّا ہے! جو ہونٹوں پر اَڑی ہے!

 

روتے ہوئے سامانِ سفر باندھ رہے ہیں

محسوس یہ ہوتا ہے قیامت کی گھڑی ہے

 

اِک گنبدِ خضرا ہے محیط دل و دیدہ

دھندلائی ہوئی آنکھوں میں تصویر جڑی ہے

 

کھنچتے چلے جاتے ہیں قدم سوئے حرم پھر

یہ شہرِ مدینہ سے نکلنے کی گھڑی ہے

 

آتے ہوئے کیا سہل مدینے کا سفر تھا؟

جاتے ہیں تو ایک ایک قدم راہ کڑی ہے!

 

لَوٹا ہے مدینے سے ریاضؔ اپنا بدن ہی

جو روح ہے وہ اب بھی مواجہ پر کھڑی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ