اردوئے معلیٰ

پائی نہ تیرے لطف کی حد سید الورٰی

 

پائی نہ تیرے لطف کی حد سید الورٰی ​

تجھ پر فدا مرے اب و جد سید الورٰی​

 

تیری ثنا ورائے نگاہ و خیال ہے​

فخرِ رسل ، حبیب ِ صمد ، سید الورٰی ​

 

تو مہر لازوال سرِ مطلعِ ازل​

تو طاقِ جاں میں شمعِ ابد سید الورٰی ​

 

عرفان و علم ، فہم و ذکا تیرے خانہ زاد​

اےجانِ عشق ، روحِ خرد ، سید الورٰی​

 

تو اک اٹل ثبوت خدا کے وجود کا​

تو ہر دلیلِ کفر کا رد ، سید الورٰی ​

 

اہل جہاں کو ایسی نظر ہی نہیں ملی​

دیکھے جو تیرا سایہ قد سیدالورٰی​

 

گزرے جو اِس طرف سے وہ گرویدہ ہو ترا​

یوں عنبریں ہو میری لحد سیدالورٰی​

 

درکار مرگ و زیست کے ہر موڑ پر مجھے​

تیری پناہ ، تیری مدد ، سید الورٰی ​

 

تائبؔ  کی یہ دعا ہے کہ اُس کی بیاضِ نعت​

بن جائے مغفرت کی سند سید الورٰی ​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ