پردۂ ہجر نگاہوں سے سرکتا دیکھوں

پردۂ ہجر نگاہوں سے سرکتا دیکھوں

آخرِ شب مہِ طیبہ کو چمکتا دیکھوں

 

ہر نئی شام نیا رنگِ تمنا لائے

شوقِ دیدار کے غنچوں کو چٹکتا دیکھوں

 

سبز گنبد مری آنکھوں میں سمائے ایسے

آنسوؤں میں بھی یہی رنگ جھلکتا دیکھوں

 

یاد آئیں مجھے اُس دانشِ کُل کی باتیں

جب کسی دور کے انساں کو بھٹکتا دیکھوں

 

ایک اعزاز ہے اُس کے در کا سوالی ہونا

کسی سائل کو نہ اُس در پہ جھجکتا دیکھوں

 

جب بھی فریاد کے لہجے میں کہوں نعتِ نبی

بحرِ رحمت کو کناروں سے چھلکتا دیکھوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ