پردۂ ہجر نگاہوں سے سرکتا دیکھوں

پردۂ ہجر نگاہوں سے سرکتا دیکھوں

آخرِ شب مہِ طیبہ کو چمکتا دیکھوں

 

ہر نئی شام نیا رنگِ تمنا لائے

شوقِ دیدار کے غنچوں کو چٹکتا دیکھوں

 

سبز گنبد مری آنکھوں میں سمائے ایسے

آنسوؤں میں بھی یہی رنگ جھلکتا دیکھوں

 

یاد آئیں مجھے اُس دانشِ کُل کی باتیں

جب کسی دور کے انساں کو بھٹکتا دیکھوں

 

ایک اعزاز ہے اُس کے در کا سوالی ہونا

کسی سائل کو نہ اُس در پہ جھجکتا دیکھوں

 

جب بھی فریاد کے لہجے میں کہوں نعتِ نبی

بحرِ رحمت کو کناروں سے چھلکتا دیکھوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
مہر ھدی ہے چہرہ گلگوں حضورؐ کا
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
حَیَّ علٰی خَیر العَمَل
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
تجھے مِل گئی اِک خدائی حلیمہ
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
نہیں شعر و سخن میں گو مجھے دعوائے مشاقی

اشتہارات