اردوئے معلیٰ

پَے بہ پَے اور جا بجا رب عظیم

ذکر ہے تیرا چھڑا رب عظیم

 

سب ترے سب ہے ترا رب عظیم

اے خدا میرے خدا رب عظیم

 

وسعت کونین ہر ذرے میں ہے

مرحبا صد مرحبا رب عظیم

 

تو نظر آتا نہیں لیکن ہے تو

آئینہ در آئینہ رب عظیم

 

سطح دریا پر جو لکھتی ہے ہوا

ہے تری حمد و ثنا رب عظیم

 

صبح کی دہلیز پر محو خرام

ہے تری باد صبا رب عظیم

 

قریۂ شب میں جو روشن ہے بہت

ہے وہ تیرا ہی دیا رب عظیم

 

دشت تنہائی میں جب میں نے کہا

پتھروں نے بھی کہا رب عظیم

 

ساتھ جس کے میں بھی ہوں محو سفر

ہے ترا ہی قافلہ رب عظیم

 

ذلتیں اس کا مقدر ہو گئیں

دور جو تجھ سے ہوا رب عظیم

 

جس نے پانی کو روانی کی عطا

وہ مرا ہے ہاں مرا رب عظیم

 

شاخ سدرہ بھی تری تخلیق ہے

عرش اعظم بھی ترا رب عظیم

 

تیری خلاقی کے گن گاتے ملے

برگ گل ، رنگ حنا رب عظیم

 

جس نے تیری عظمتوں پر کی نظر

بجھ گئی اس کی انا رب عظیم

 

آگہی دیوانگی ہوش و خرد

سب ہے تیری ہی عطا رب عظیم

 

شاعری دی ہے تو یہ بھی کر کرم

شعر ہوں سب سے جدا رب عظیم

 

وقت سے پہلے ہی آخر کیوں یہاں

حشر برپا ہو گیا رب عظیم

 

بھیج دے میرے لیے بھی بھیج دے

تاج صد توقیر یا رب عظیم

 

ہو نہ شرمندہ ترے ہوتے ہوئے

نورؔ کا دست دعا رب عظیم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات