اردوئے معلیٰ

Search

پڑھتے ہیں ثنا آپ کی کرتے ہیں رقم بھی

سرکارِ مدینہ کے غلاموں میں ہیں ہم بھی

 

اف حسنِ سراپائے نبی رشکِ قمر ہے

ہے اپنی مثال آپ خوشا حسنِ شیم بھی

 

اب بھی نہ یقیں آئے جسے ہے وہ نگوں بخت

کھائی ہے رسالت پہ مرے رب نے قسم بھی

 

اڑتا ہے خداوند کی توحید کا پرچم

ساتھ اس کے ہے پراں شہِ والا کا علم بھی

 

ہے خاک نشیں یوں تو مگر عرش رسا ہے

مسکیں ہے مگر صاحبِ صد جاہ و حشم بھی

 

کہنا تو بڑی بات ہے دل چاہئے پتھر

ہم کر نہ سکیں حال وہ طائف کا رقم بھی

 

چھلنی ہے کلیجہ شہِ دیں کا دمِ ہجرت

چھوٹا حرمِ پاک ہے احباب کا غم بھی

 

اسلام کی تبلیغ میں کیا کچھ نہیں گزرا

طعنے بھی سنے اس نے سہے جور و ستم بھی

 

آتے ہیں شہِ دیں کی مجالس میں سبھی لوگ

خوش بخت پہنچتے ہیں یہاں سبز قدم بھی

 

ہر طالبِ حق کے لئے دونوں ہیں ضروری

فرمانِ عزیز آپ کا اور نقشِ قدم بھی

 

کر پیروی اسوۂ محبوبِ خدا یوں

قرآن کے سایہ میں چلے تیغِ دو دم بھی

 

عاصی ہے نظرؔ اس پہ شفاعت کا کرم ہو

تو شافعِ محشر بھی ہے تو شاہِ امم بھی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ