اردوئے معلیٰ

Search

پیش ہوں گا جب قیامت میں خدا کے سامنے

رو پڑوں گا گِڑگِڑا کر مصطفی کے سامنے

 

جب کبھی شہرِ مدینہ کی مجھے لگتی ہے پیاس

آئینہ قسمت مری رکھتی ہے لا کے سامنے

 

روزِ محشر جب گنہگاروں میں ہو گی کھبلی

کالی کملی میں چھپا لیں گے وہ آ کے سامنے

 

ہم کو دنیا کے کسی رُتبے کی کچھ پروا نہیں

” سروری کیا چیز ہے اُن کے گدا کے سامنے ”

 

گُنبدِ خضراؔ کے آگے یوں کھڑا تھا میں کبھی

جیسے من موہن کوئی ہو دلربا کے سامنے

 

کیا کہوں کیا زندگی کا لطف آیا تھا مجھے

رو پڑا تھا بے تحاشہ میں تو پا کے سامنے

 

سب نبی اللہ کے پیارے ہیں سارے محترم

پر کھڑے ہیں ہاتھ باندھے پیشوا کے سامنے

 

حسن میں آقا مرے حسرتؔ، حسیں بے حد حسیں

چاند پھیکا پڑ رہا صلِ علا کے سامنے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ