اردوئے معلیٰ

Search

چاند گر آپ کے تلووں کا نظارہ کرلے

دعوئ حسن سے پھر خود ہی کنارہ کرلے

 

اک طرف پائے شہ دیں کو اٹھا کر رکھ دوں

دوسری اور تو کنعان ہی سارا کرلے

 

تجھ کو گر حسن حقیقت کی طلب ہے خورشید

ان کی چوکھٹ کو ذرا جاکے بہارا کرلے

 

روسیہ ہو کے بھی گر حسن کا طالب ہے تو

حسن بے مثل کے جلووں کا نظارہ کرلے

 

آئینہ پاے مقدس کا میں دیتا ہوں قمر

سامنے رکھ کے اسے خود کو سنوارا کرلے

 

دھوپ محشر کی کڑی اور فدا ہے حیراں

زلف کی چھاؤں میں اب اس کو خدارا کرلے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ