چشمِ نم آپ کا دیدار ہی مانگے جائے

 

چشمِ نم آپ کا دیدار ہی مانگے جائے

دید کو حسنِ طرح دار ہی مانگے جائے

 

دست بستہ ہے زباں آپ کے در پر آقا

دولتِ مدحتِ سرکار ہی مانگے جائے

 

نقشِ نعلینِ کرم بار پہ سر رکھنے کو

بے خودی سنگِ درِ یار ہی مانگے جائے

 

جذبۂ شوق مرا چشمِ بصیرت کے لئے

خاکِ نعلینِ کرم بار ہی مانگے جائے

 

معتبر ہو یہ سخن نعت عطا ہو آقا

نطق اب طاقتِ اظہار ہی مانگے جائے

 

آپ سے اذنِ حرم آپ کا منظرؔ آقا

مقطعِ نعت میں ہر بار ہی مانگے جائے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ