اردوئے معلیٰ

Search

چشمِ کرم حضور کی فیضانِ نعت ہے

رزقِ سخن ملا ہے یہ احسانِ نعت ہے

 

ترقیمِ نعت سے ہوئے الفاظ نور نور

اور جگمگا اُٹھا مرا دیوانِ نعت ہے

 

مدحت کے پھول بے بہا دامن میں آگئے

کتنا بڑا نبی کا گلستانِ نعت ہے

 

کچھ سسکیاں ہیں اشک ہیں کچھ درد اور درود

اتنا سا میرے پاس بھی سامانِ نعت ہے

 

عشقِ نبی میں ڈوب کے جو بھی کرے ثنا

وہ ہی عظیم ہے وہی سلطانِ نعت ہے

 

غارِ حرا کا نور ہو آنکھوں میں گر بسا

خامہ بھی وہ لکھے گا جو شایان نعت ہے

 

دل میں اگر ہو یاد شہِ دو جہان کی

ہر شعبۂ حیات میں امکانِ نعت ہے

 

آئی بہارنعتوں کی کلیاں چٹک گئیں

اے ناز تیرے قلب پہ بارانِ نعت ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ