اردوئے معلیٰ

چشمۂ جود و سخاوت ہیں ترے گیسوئے نور

چشمۂ جود و سخاوت ہیں ترے گیسوئے نور

قاسمِ نکہت و رنگت ہیں ترے گیسوئے نور

 

شانۂ نور پہ وہ چہرۂ انور کے قریں

خَم بہ خَم گوشۂ حیرت ہیں ترے گیسوئے نور

 

رنگ میں جیسے کوئی رنگوں کا بازار ُکھلے

حسن میں حدِّ نہایت ہیں ترے گیسوئے نور

 

تہہ بہ تہہ، معنیٰ بہ معنیٰ ہے کرشمہ سازی

مصدرِ عِلمِ بلاغت ہیں ترے گیسوئے نور

 

عکس پرور ہیں خد و خالِ کرم سے پیہم

رشکِ صد رنگِ صباحت ہیں ترے گیسوئے نور

 

حیطۂ فکر پہ ہے نور کے دھاروں کا نزول

نعت کا مصرعۂ طلعت ہیں ترے گیسوئے نور

 

پیکرِ حسن تو ہے نور اُجالوں کا امیں

اوجِ رنگت میں ملاحت ہیں ترے گیسوئے نور

 

اُن کو لکھے بھی تو مقصودؔ کہاں تک لکھے

مظہرِ نزہت و نْدرت ہیں ترے گیسوئے نور

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ