اردوئے معلیٰ

چوم آئی ہے ثنا جُھوم کے بابِ توفیق

چوم آئی ہے ثنا جُھوم کے بابِ توفیق

کس سے ممکن ہے کرے کوئی حسابِ توفیق

 

اذن رہتا ہے تری نعت کا ہر سانس کے ساتھ

پڑھتا رہتا ہوں مَیں دن رات نصابِ توفیق

 

پیش منظر میں ہے خوشبوئے مجسم پیہم

کھِل اُٹھا ہے مرے آنگن میں گلابِ توفیق

 

اِک تری نعت تری شان کے لائق آقا

غارِ ادراک پہ نازل ہو کتابِ توفیق

 

ایک ہی کیفِ مسلسل میں رہے عمرِ رواں

اے خدا آنکھ میں رکھ دے کوئی خوابِ توفیق

 

مہبطِ نعت میں رہتا ہُوں، پہ ترساں لرزاں

کہ بہت رائق و نازک ہے حبابِ توفیق

 

دشتِ طیبہ میں ہیں مقصودؔ سخن کے چشمے

جن سے حاصل ہے مرے شعر کو آبِ توفیق

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ