چو سائل برسرِ آں کُو نہ بہرِ نان می آیم

چو سائل برسرِ آں کُو نہ بہرِ نان می آیم

چو مُوسیٰ برسرِ طُور از پئے دیدار می گردم

 

میں اُس کوچے میں سوالی اور فقیروں کی

طرح روٹی مانگنے نہیں آتا بلکہ اُس کے کوچے

میں اُس کے دیدار کے لیے اُسی طرح گھومتا ہوں

جیسے مُوسیٰ کوہِ طُور پر دیدار کے لیے جاتے تھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ