چُبھی ہے دل میں وہ نوکِ سنانِ وہم و گماں

چُبھی ہے دل میں وہ نوکِ سنانِ وہم و گماں

ہوا ہے نقشِ سویدا نشانِ وہم و گماں

 

میں ایک سایۂ لرزاں ہوں ہست و نیست کے بیچ

مرا وجود ہے بارِ گرانِ وہم و گماں

 

نہ کھا فریب خریدارِ رنگ و بوئے چمن

محیطِ صحنِ چمن ہے دکانِ وہم و گماں

 

قدم قدم پہ ہے دامن کشاں یقینِ بہار

روش روش پہ ہویدا خزانِ وہم و گماں

 

وہ ایک لفظ حقیقت مدار ہے جس پر

لکھا ہوا ہے کہیں در بیانِ وہم و گماں

 

عیاں تھا عالمِ خواب و خیال میں کیا کیا

کھلی جو آنکھ تو سب داستانِ وہم و گماں

 

تمام حکمتیں باطل ہیں عشق کے آگے

تمام فلسفے سودا گرانِ وہم و گماں

 

بدونِ میرِ سفر ہیں جو رہروانِ ہدیٰ

بھٹک رہے ہیں پسِ کاروانِ وہم و گماں

 

مرے لہو میں جزیرہ تری محبت کا

یقین زارِ حقیقت میانِ وہم و گماں

 

نویدِ عالمِ امکان ہے خیال ترا

سمٹ رہا ہے مسلسل جہانِ وہم و گماں

 

ظہیر ؔناوکِ بے زور ہے سخن بھی ترا

گرفتِ فکر بھی جیسے کمانِ وہم و گماں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ