اردوئے معلیٰ

چھلکی جو مئے تو بن کے شرر گونجتی رہی

چھلکی جو مئے تو بن کے شرر گونجتی رہی

مینا سے تابہ ساغر زر گونجتی رہی

 

بادل کی سی گرج تھی یہ دنیا کہیں جسے

جو درمیانِ شمس و قمر گونجتی رہی

 

تھی جو دعا وہ ابر کے دامن میں چُھپ گئی

جو بددعا تھی بن کے اثر گونجتی رہی

 

آئی خزاں طیور تو جتنے تھے اُڑ گئے

نغموں سے پھر بھی شاخِ شجر گونجتی رہی

 

آغوشِ شب میں پھول تو مرجھا کے گر گئے

صحنِ چمن میں بادِ سحر گونجتی رہی

 

تھا کوئی اجنبی کہ جو آیا ، چلا گیا

صدیوں تلک اُسی کی خبر گونجتی رہی

 

فریادِ دل کسی کے دبائے نہ دب سکی

جب کٹ گئی زباں تو نظر گونجتی رہی

 

سمجھے تھے ہم خموش تھی اپنے قدم کی چاپ

کیا جانے کیوں یہ رہ گزر گونجتی رہی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ