اردوئے معلیٰ

Search

 

چھیڑوں جو ذکر شاہِ زماں جھوم جھوم کر

چومیں ملائکہ یہ زباں جھوم جھوم کر

 

اللہ الہ زارِ مدینے کی نزہتیں

قربان ہے بہارِ جناں جھوم جھوم کر

 

ذکرِ جناں پہ طیبہ نگاہوں میں پھر گیا

پہنچی نظر کہاں سے کہاں جھوم جھوم کر

 

جلوے جو ان کی نعلِ مقدس کے عام ہوں

سوئے زمیں فلک ہو رواں جھوم جھوم کر

 

چٹکی جو یادِ زُلفِ نبی میں کہیں کلی

مہکی فضائے عطر فشاں جھوم جھوم کر

 

کل دیکھنا کہ ان کے گناہگار کی طرف

رحمت بڑھے گی سایہ کناں جھوم جھوم کر

 

اُن کے تصوّ رات میں ہم جب بھی کھوگئے

آیا سُرورِ کون و مکاں جھوم جھوم کر

 

میں بارگاہِ قُرب میں بڑھتا چلا گیا

کہتا رہا جو اچھےمیاں جھوم جھوم کر

 

ہوتا ہے ذکر لذّت کوثر جہاں خلیل

پیتے ہیں بادہ نوش وہاں جھوم جھوم کر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ