اردوئے معلیٰ

Search

چہرہ ہے کہ بے داغ جواں صبحِ فروزاں

خود بن گئی حیرت کا جہاں صبحِ فروزاں

 

فیضان رساں ہیں تری آنکھیں ، ترے عارض

اور تشنہ لباں آبِ رواں ، صبحِ فروزاں

 

یہ فیصلہِ غوطہ زنِ بحرِ ادب ہے

سرکار کہاں اور کہاں صبحِ فروزاں

 

یہ اُن کے تبسم کی فقط ایک جھلک ہے

کہتے ہیں جسے آپ مِیاں ! صبحِ فروزاں

 

شبنم سے وضو کر کے سرِ عالمِ امکاں

کرتی ترا حُسن بیاں صبحِ فروزاں

 

خیراتِ رخِ سیدِ عالم کے سبب ہے

پیغام برِ امن و اماں ، صبحِ فروزاں

 

جن کو بھی شبِ تار سے شکوہ ہے تبسم

ہے آپ کے ہاں اُن کی زباں صبحِ فروزاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ