اردوئے معلیٰ

کئیں شام نماشاں ویلے دا

ہک درد کھڑوتے ویہڑے وچ

کئیں ہنجواں دے ہن ڈیوے جو

اکھیاں تے بلدے بجھدے ہن

کئیں کالی ہجر دی ڈینڑ کھڑی

ہے ، بکل مار ڈریندی ہے

کئیں روگ کھڑن دہلیز اتے

دروازہ بھن کے آ ویندن

میں روز اساراں کندھ اندروں

یاجوج بنڑے ڈکھ کھا ویندن

میں نت آکھاں ، بھاء لانواں چا

ایہنہ عشق دے سنجڑے بوٹے کوں

نہ چھاں ڈیندے نہ پھل چیندے

ایہہ بوٹا ہنڑ پھلواری کوں

نہ آج چیندے نہ کل چیندے

کئیں شام نماشاں ویلے دا

ہک روگ چھلیندے زخماں کوں

میں آپوں عقل ونجائی ہم

میں اپنڑی کیتی چائی ہم

میں آپ زوال کوں سڈ مارے

میں اپنڑی ذات نوائی ہم

میں آپ تماشہ بنڑ گئی ہاں

اوں چندرے ایسی چال تنڑی

او ہئی کھڈکار زمانے دا

میں کملی ہم جو کھیڈ بنڑی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات