اردوئے معلیٰ

Search

کائناتِ رنگ و بو کا کُل خزینہ اک طرف

ارض طیبہ پر سجا اخضر نگینہ اک طرف

 

گھوم کر دیکھا جہاں میں ہر نگر لیکن شہا!

ساری دنیا اک طرف تیرا مدینہ اک طرف

 

سارے پھولوں کی مہک ہو یا کہ ہو مشکِ ختن

سب کی خوشبو اک طرف تیرا پسینہ اک طرف

 

ماہِ میلاد النبی کی شان ہے سب سے الگ

ماہ سارے اک طرف وہ اک مہینہ اک طرف

 

زائروں کو لے کے جاتا ہے جو سوئے مصطفٰی

بحری بیڑے اک طرف وہ اک سفینہ اک طرف

 

خوانِ نعمت سے ملا، نانِ شبینہ شُکر ہے!

نعمتیں سب اک طرف نانِ شبینہ اک طرف

 

اُلفتِ سرکار سے معمور ہے جو ہر گھڑی

لاکھوں سینے اک طرف وہ ایک سینہ اک طرف

 

ارضِ طیبہ میں سکونت منفرد اعزاز ہے

سارے انساں اک طرف اہلِ مدینہ اک طرف

 

چومتے ہیں نام ان کا اہلِ سنّت اے جلیل

سب قرینے اک طرف ، ان کا قرینہ اک طرف

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ