اردوئے معلیٰ

کاش دیکھوں میں بھی کوئی روشن و بیدار خواب

آمدِ آقا سے بن جائے گل و گلزار خواب

 

جاگتی آنکھوں سے طیبہ دیکھنا اچھا لگا

ماہِ طیبہ کے بھی دکھلا دے کبھی انوار خواب

 

اُمِّ معبد نے جو دیکھا دیدۂ بیدار سے

اُس جمالِ مصطفی سے ہو کبھی ضَو بار خواب

 

لفظ میں سچائیوں کے رنگ بھر جائیں عزیزؔ

جب بھی پائیں شعر کے آہنگ میں اظہار خواب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات