کاش میں بھی زندگی میں صبحِ بہجت دیکھ لوں!

کاش میں بھی زندگی میں صبحِ بہجت دیکھ لوں!

قریۂ ہستی میں آقا ﷺ کی حکومت دیکھ لوں

 

خاکِ نقشِ پائے سرور ﷺ ہو اگرمجھ کو نصیب!

میں اسے سرمہ بناؤں اور جنت دیکھ لوں

 

نورِ نقشِ پائے آقا ﷺ ہی نگاہوں میں رہے

محفلوں میں رہ کے بھی میں رنگِ خلوت دیکھ لوں

 

میرا خامہ سرورِ کونین ﷺ کی نعتیں لکھے

زیست کے لمحات میں تاثیرِ مدحت دیکھ لوں

 

یوں ملے پیکر رسولِ ہاشمی ﷺ کے عشق کو

مدح کی صورت میں، میں تجسیمِ نکہت دیکھ لوں

 

داد پاؤں روزِ محشر سرورِ کونین ﷺ سے

خُلد میں حَسَّانِؓ طیبہ کی رفاقت دیکھ لوں

 

دیکھ لوں میں بھی مناظر پیرویِ شاہ ﷺ کے

ہر مسلماں کے عمل میں رنگِ سنت دیکھ لوں

 

سعیِ آقا ﷺ سے جو چھایا تھا فضاؤں میں کبھی

اُمتِ آقا ﷺ میں وہ رنگِ اُخوَّت دیکھ لوں

 

میں عزیزؔ احسن بہت رکھتا ہوں یوں تو خواہشیں

کاش میں خود کو ہی پابندِ شریعت دیکھ لوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سب سے اولیٰ و اعلیٰ ہمارا نبی ﷺ
ایمان ہے قالِ مصطفائی
یا محمد ہے سارا جہاں آپ کا
عالم کی ابتدا بھی ہے تو ، انتہا بھی تو
مطافِ کعبہ اقدس میں نعتِ مصطفےٰؐ مانگوں
ہر صبح ہے نورِ رُخِ زیبائے محمدﷺ
کتنا بڑا ہے مجھ پہ یہ احسانِ مصطفٰے
باعثِ سکونِ دل کا، محمدﷺ کا نام ہے
سلام اس ذات اقدس پر، سلام اس فخر دوراں پر
ہے وہی کنجِ قفس اوروہی بے بال وپری