اردوئے معلیٰ

Search

کافی ہیں خلاصی کو سرِ حشر یہ نعمات

لکھتا ہوں سرِ نامہ تری نعت تری بات

 

ہر ایک زمانے میں رہا ذکرِ محمد

ہر مطلعِ مصحف سے نمایاں ہے تری ذات

 

ترتیل سے کھلتے رہے گلہاے عقیدت

اک جذب میں جب بھی پڑھیں قرآن کی آیات

 

مازاغ کے سرمے سے مزین ہیں وہ آنکھیں

اور زلفِ منور سے چلی نور کی برسات

 

خوش بخت ہیں سب راہِ درودی کے مسافر

انساں ہوں کہ جنات و جمادات و نباتات

 

اک میم ہی لکھا تھا تری مدح میں آقا

یک لخت سجی قوسِ قزح بر سرِ صفحات

 

اک مژدۂ جاؤک سے ڈھارس ہے سرِ حشر

اُنظُر کے وظیفے سے ہیں مملو مرے جذبات

 

ساقط ہوئی جاتی ہے مرے دل کی یہ دھڑکن

میں پیشِ مواجہ ہوں لیے نعت کی سوغات

 

حاضر ہے بہ صد شوق تہی دست یہ منظر

احرامِ ثنا باندھے ہوئے بر سرِ میقات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ