اردوئے معلیٰ

کافی ہے بہرِ خیر یہ احسانِ پنج تن

نسلوں سے ہُوں غُلامِ غُلامانِ پنج تن

 

تب سے ہُوں بے نیاز ، غمِ روزگار سے

جب سے ہے میرے ہاتھ میں دامانِ پنج تن

 

موسم نئی بہار کا ہے کتنا جاں فزا

جاری ہے کشتِ شوق پہ بارانِ پنج تن

 

کس کو ہُوئی زحمتِ اظہارِ مدعا

رکھتا نہیں ہے کس کی خبر خوانِ پنج تن

 

اُس سمت ہی رواں ہیں عنایت کے قافلے

جس سمت لطف بار ہے میلانِ پنج تن

 

اُس گھر کی بیتِ عام سے تمثیل الاماں !

سدرہ نشین ہو جہاں دربانِ پنج تن

 

اوجِ کمالِ خانۂ عظمت مآب دیکھ

سُلطانِ کائنات ہیں سُلطانِ پنج تن

 

تشنہ لبئ کشتِ تمنا کے واسطے

کافی ہے ایک قطرۂ فیضانِ پنج تن

 

چاروں طرف ہے پنج تنِ پاک ہی کا ذکر

نا مُختَتم ہے قصۂ پاکانِ پنج تن

 

خیرِ کثیر پنج تنِ پاک سے ہے خاص

اِعلانِ خیرِ عام ہے اعلانِ پنج تن

 

مقصودؔ بے سبب نہیں ایقانِ مغفرت

بخشش کا میرے ساتھ ہے پیمانِ پنج تن

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات