اردوئے معلیٰ

Search

کبھی دردو سوز بن کر کبھی اشک بن کے آئے

تری مہربانیاں ہوں تو یہ دل قرار پائے

 

تری یاد رونقِ جاں ترا ذکر روحِ ایماں

یہی نُور تیرگی میں مجھے راستہ دکھائے

 

یہی کیف میرے اندر اِسی زُعم پہ ہوں نازاں

میں جھُکا ہوں تیرے در پہ مجھے کون اب جھکائے

 

وہی جانِ عالمیں ہی مقصودِ زندگی ہیں

دل میں کسی کی چاہت اب کس طرح سمائے

 

ترے ذکر کی ہے برکت میرا گھر ہوا منوّر

ہو نظر ترے کرم کی تو یہ دل بھی جگمگائے

 

بن تیرے کون آقا ہے بے کسوں کا والی

رحمت سے اپنی کہہ دو دکھ درد سب مٹائے

 

اِک سائلِ مدینہ میں تڑپ رہا ہوں کب سے

ترے در پہ حاضری کا مژدہ کوئی سنائے

 

مولا شکیلؔ کو بھی سوزو ہنر عطا ہو

نعتِ نبی سے یہ بھی دِل کے دئیے جلائے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ