اردوئے معلیٰ

کبھی چشمِ شوق سے منعکس، کبھی لوحِ دل پہ لکھا ہُوا

کبھی چشمِ شوق سے منعکس،کبھی لوحِ دل پہ لکھا ہُوا

ہے میانِ شیشۂ شہرِ جاں،ترا اسمِ نور سجا ہُوا

 

ترے لمسِ خواب کی طلعتیں،ہیں عیاں سپیدۂ صبح سے

ترے لمحہ لمحہ طلوع سے،ہے خیالِ رفتہ جُڑا ہُوا

 

مری صبحِ شوق کی تابِ کُل!کبھی میرے قریۂ شب میں آ

مرا حرفِ چشم ہے منتشر،مرا نطقِ دل ہے بُجھا ہُوا

 

مجھے دے خبر مرا راہبر،مری جاں کہاں ، مرا دل کدھر

وہ تھے جاتے وقت جو ہمسفر،دمِ واپسیں اُنہیں کیا ہُوا

 

شبِ با مُراد مچل ذرا،مری دید دید میں ڈھل ذرا

کسی یادِ کیف کا ہاتھ ہے مرے رتجگے پہ دھرا ہُوا

 

اُسے کیا خبر کسی غیر کی،اُسے کیا غرض کسی اور سے

ترے خوانِ ناز کے عرش پر،جو ترا گدا ہے پلا ہُوا

 

اِسے اپنے عرشِ قدوم میں گھڑی دو گھڑی کی پناہ دے

کہ یہ دشتِ زیست کا راہرو بڑی دیر سے ہے تھکا ہُوا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ