اردوئے معلیٰ

کب ہے مہ و نجوم کے انوار کی طلب

کب ہے مہ و نجوم کے انوار کی طلب

مجھ کو فقط ہے رحمتِ سرکار کی طلب

 

اب تو حضور خواب میں تشریف لائیے

کب سے ہے مجھ کو آپ کے دیدار کی طلب

 

صحرائے طیبہ جس نے بھی دیکھا ہے ایک بار

اس کو ہوئی نہ پھر گل و گلزار کی طلب

 

دونوں جہاں میں راحتیں پانے کے واسطے

رکھتا ہوں اُن کے سایۂ دیوار کی طلب

 

احوال عرض کرنے کی حاجت نہیں مجھے

وہ جانتے ہیں عاجز و بیمار کی طلب

 

چشمِ کرم حضور کی آصف پہ جب ہوئی

دل میں رہی نہ درہم و دینار کی طلب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ