کتابِ عرشِ ثنا کا عنواں ـ’’انا محمد‘‘

کتابِ عرشِ ثنا کا عنواں انا محمد

ہُوئے محمد ہیں خود ثنا خواں انا محمد

 

لطافتوں کے تمام لہجوں کا استعارہ

وہ مدحِ ممدوحِ حرفِ خُوباں انا محمد

 

کمال اوجِ سخن تھا اُس ایک زمزمے میں

فصیلِ لب پر ہُوا جو رخشاں انا محمد

 

اُتر رہے تھے وہ ظلمتوں پر ضیا کے موسم

کہ ہر طرف تھا سحر بہ داماں انا محمد

 

بصارتوں میں فروغِ طلعت وہ اسم عالی

سماعتوں میں سرودِ دوراں انا محمد

 

حصارِ جاں میں نئی سحر کی نوید مہکی

شبِ سیہ میں ہُوا فروزاں انا محمد

 

سخن میں جیسے حیات پرور ثنائے خواجہ

خیال میں رشکِ صد بہاراں انا محمد

 

جہانِ مدحت کا سارا منظر ہی دلکشا ہے

مگر ہے مدحت بھی جس پہ نازاں انا محمد

 

عجیب تسکین سی ہے اس کی تلاوتوں میں

ہر ایک کربِ نہاں کا درماں انا محمد

 

اِدھر سے مقصودؔ سانسیں دامن چھُڑا رہی تھیں

اُدھر ہوا زندگی کا ساماں انا محمد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

رنگ بکھرے ہیں مدینہ میں وہ سرکار کہ بس !
واہ کیا مرتبہ ہوا تیرا
کون کہتا ہے کہ زینت خلد کی اچھی نہیں
نبی کے برابر ہوا ہے نہ ہو گا
آپؐ کے آستاں پہ جاتے ہیں
آپؐ کے آستاں پہ آتا ہوں
وہی محبوب، محبوبِ خُداؐ ہے
خدا کا، عشق محبوبِ خدا کا
واصف نبی کا اپنے یہاں جو بشر نہیں
کمال اسم ترا، بے مثال اسم ترا