اردوئے معلیٰ

کربِ درونِ ذات کا بھی اندمال سوچ

کربِ درونِ ذات کا بھی اندمال سوچ

مقصودؔ ! عجزِ حرف سے نعتِ کمال سوچ

 

وہ بارگاہ اور بیاں کی یہ بے بسی

لفظوں سے ماورا کوئی اظہارِ حال سوچ

 

اُس سے کرم بھی مانگ ، خُدائے کرم بھی مانگ

جیسی کریم ذات ہے ویسا سوال سوچ

 

وہ دید یاب تیرہ برس ، وہ زمانِ خیر

شہرِ کرم نواز کے وہ ماہ و سال سوچ

 

پیشِ حضور شورِ تنفس ہے ناروا

شورِ نیاز و گریۂ دل کو سنبھال سوچ

 

شایانِ نعتِ سرورِ عالَم سخن محال

بس حسرتِ ثنا کا ہی کوئی خیال سوچ

 

حرفوں کے ربط و ضبط سے کب نعت ہو سکے

چاہے ہزار رنگ میں یہ اتصال سوچ

 

اُس منبعِ جمال پہ پیہم درود پڑھ

اُس پیکرِ کمال کو بس لایزال سوچ

 

جذب و شعور ہی نہیں کافی برائے نعت

مقصودؔ ماورائے حدِ حال و قال سوچ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ