اردوئے معلیٰ

Search

کرتی ہے تسلسل سے اندھیروں کا سفر رات

تب جا کے کہیں تکتی ہے تنویرِ سحر رات

 

چھا جائے رخِ تازہ سحر پہ بھی اداسی

عشّاق کی آہوں کو چھپائے نہ اگر رات

 

یہ وقت ہے میلادِ شہِ کون و مکاں کا

چل کفر کے چوراہے سے پل بھر میں اتر رات !

 

کچھ ایسی محبت کی ضیاء دیجئے مجھ کو

کر پائے نہ تاریک مرے قلب و نظر رات

 

وہ چاہیں تو ہر دن ہو مرا عید کے جیسا

وہ چاہیں تو معراج کی شب ہو مری ہر رات

 

بے فیض کریں طولِ شبِ ہجر کا شکوہ

عشّاق تو اِک آہ میں کر جاتے ہیں سر رات

 

یہ چاند سناتا ہے ترے نعل کے قصّے

یوں کرتا ہے تاروں کی معیّت میں بسر رات

 

ہمرازِ فدایانِ رخِ ماہِ عرب ہے

رکھتی ہے حسِیں زلفِ معنبر کی خبر رات

 

دن شارحِ بیدارئِ حضرت ہے تبسم

اور عالمِ خوابیدہِ حضرت کا اثر رات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ