اردوئے معلیٰ

Search

کرم کی اک نظر آقا، جدائی مار ڈالے گی

کرم بارِ دگر آقا، جدائی مار ڈالے گی

 

مرا دل آپ کو ڈھونڈے، نگاہیں آپ کو ڈھونڈیں

مرا گھر منتظر آقا، جدائی مار ڈالے گی

 

میں ہوں بھٹکا ہوا راہی، نظر دے کر مجھے دے دیں

مدینہ کی ڈگر آقا، جدائی مار ڈالے گی

 

میں چا ہوں اُڑتے اُڑتے آپ کے قدموں میں جا پہنچوں

عطا ہوں بال و پر آقا، جدائی مار ڈالے گی

 

مرے آقا مرے دل میں قدم رکھ کر اسے اپنی

بنا لیں رہگزر آقا، جدائی مار ڈالے گی

 

بُلا لیں اپنے در پر آپ اس کمتر سگِ در کو

کہ ہوں میں در بہ در آقا، جدائی مار ڈالے گی

 

جھلک روئے منور کی دکھا دیں مجھ کو خوابوں میں

پکارے ہے ظفرؔ آقا، جدائی مار ڈالے گی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ