اردوئے معلیٰ

Search

کرم کی ایسی بہار آوے کہ مدحِ خیر الانام ہو وے

میں تشنہ لب ہوں مرے خدایا مجھے عطا ایک جام ہو وے

 

کبھی جو مہکے مرا تخیل بکھیر دوں میں ثنا کی کلیاں

دُرود کی پھر بناؤں مالا یہی مرا صرف کام ہو وے

 

ولائے احمد کی بھیک مانگوں سرور ہو میری زندگی میں

سجائے راکھوں نبی کی محفل یہی تمنا دوام ہو وے

 

نہ روشنی کچھ شعور میں ہے نہ روح میں کوئی تازگی ہے

برس پڑیں اب سحابِ رحمت کچھ ایسا بھی اہتمام ہو وے

 

کروں میں ذکرِ حبیب ہر دم یہی تو بس میری بندگی ہو

اسی وظیفے میں صبح گزرے اسی میں ہر ایک شام ہو وے

 

جو چمکے تقدیر کا ستارہ تو ناز کی در پہ حاضری ہو

وہیں پہ ہو میرا جینا مرنا وہیں پہ میرا قیام ہو وے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ