کرو مخلوق کی خدمت، یہی خالق کا فرماں ہے

کرو مخلوق کی خدمت، یہی خالق کا فرماں ہے

مشیت ایزدی ہے یہ، یہی فرمانِ قرآں ہے

کرو خدمت فقیروں کی، دریدہ جن کا داماں ہے

نہ اِنسانوں کے کام آئے، ظفرؔ تو کیسا انساں ہے ؟

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

آپؐ ہیں خیر البشر خیر الوریٰ میرے نبیؐ
یہ عطائے خدا ہے نعمت ہے
محبت ہے مجھے رب العلیٰ سے
کسی کو مال و دولت سے نوازا
لکھوں پہلے حمدِ علیِ عظیم
آئی صبا ہے کاکلِ گل کو سنوار کے
ہے سلطانوں کا ایک سلطان ​
خُدا کا ذِکر دِل میں، آنکھ نم ہے
خدا کا ذکر، ذکرِ دل کشا ہے
ہے تو عظمت نشاں آقا و مولا

اشتہارات