اردوئے معلیٰ

Search

کرے مدحت نبی کی جو زباں سے

ہو رحمت اس پہ نازل آسماں سے

 

مصائب کی نہیں ہے فکر ہم کو

ملی ہے خیر ان کے آستاں سے

 

کروں گا ناز میں اپنے نبی پر

بچایا مجھ کو ہے بارِ گراں سے

 

قیامت میں پکاریں گے یہی سب

شفاعت ہو گی بس سب کی یہاں سے

 

بلا لیں آقا زاہدؔ کو مدینے

رہا جائے نہ اب اس ناتواں سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ