اردوئے معلیٰ

Search

کر رہے ہیں تیری ثناء خوانی

سوچتی دھرتی بولتا پانی

 

توُ ہے آئینہ ازل یاربّ

اور میں ہوں اَبد کی حیرانی

 

تیرے جلوؤں کے دم سے لیل و نہار

تیرے سورج کی سب درخشانی

 

گونجتا ہے ثناء کے نغموں سے

گنبدِ جاں ہے میرا نورانی

 

پار ہوتی نہیں مرے مولا

درد کی سرحدیں ہیں طولانی

 

تجھ سے بخشش کا ہے تمنائی

تیرا بندہ صبیحؔ رحمانی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ