اردوئے معلیٰ

کر سکے توصیفِ آقا کس میں یہ تاب و تواں

ہے یہ سب کارِ ثنا خوانی پئے تسکینِ جاں

 

میں رہوں تا عمر تیرے ہی لیے رطبُ اللّساں

زمزمہ سنجی کروں جب تک کہ ہے منہ میں زباں

 

برگزیدہ، مجتبیٰ، اے تاجدارِ انس و جاں

لختِ قلبِ آمنہ اے حاصلِ کون و مکاں

 

مرکزِ پرکارِ ہستی باعثِ کون و مکاں

اے محمد، اے شہِ لولاک، اے روحِ رواں

 

آپ کے قدموں کے نیچے ہے فرازِ آسماں

رُتبۂ خیر البشر ! انگشتِ حیرت در دہاں

 

تو نے بندوں کو ملایا از خدائے دو جہاں

کیا خبر کیا ہوتا گر، اک تو نہ ہوتا درمیاں

 

موجۂ بادِ صبا کی یہ تمام اٹکھیلیاں

طائرانِ خوش نوا کی جملہ نغمہ سنجیاں

 

نرگسِ شہلا کی چشمک بوئے گل کی مستیاں

ہیں تجھی سے باغِ عالم کی یہ سب رنگینیاں

 

ذکرِ پاکِ مصطفیٰ صلِّ علیٰ ہو جس جگہ

گوش بر آواز ہو کر گِرد ہوں کرّو بیاں

 

پیکرِ رحمت بنایا تجھ کو بندوں کے لیے

رب ہوا جب اپنے بندوں پر نہایت مہرباں

 

شاہدِ عرشِ معلّیٰ ہے شبِ معراج تو

اس سفر کی اک نشانی ہے یہ گردِ کہکشاں

 

سایۂ دامانِ رحمت کا سکوں مجھ کو ملے

گرمی روزِ جزا اُف اَلحفیظ و اَلاَماں

 

جامِ کوثر تو پلائے میں کہوں اک جام اور

ساقیا میں بھی تو ہوں من جملۂ تشنہ لباں

 

صدقۂ شانِ کرم روضہ پہ بلوایا مجھے

ورنہ حیثیت ہے کیا میری، کہاں میں وہ کہاں

 

قبلۂ اہلِ جہاں ہے ہاں وہی صحرا نشیں

ریگ زاروں کو بنایا جس نے رشکِ گلستاں

 

اے امیرِ کارواں ڈالیں نگاہِ التفات

بے جگہ ٹھہرا ہوا ہے کارواں کا کارواں

 

جام وحدت کا پیے بیٹھا ہے کب سے یہ نظرؔ

ڈال ساقی اک نگہ دو چند کر سرمستیاں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات