اردوئے معلیٰ

Search

کسی بھی لاٹری سے اور خزانوں سے نہیں ہوتی

ہماری حیثیت اونچی ، مکانوں سے نہیں ہوتی

 

دلوں میں زہر بھر کر کون یہ رشتے نبھاتا ہے

محبت آپ جیسے بدگمانوں سے نہیں ہوتی

 

ہماری خواہشوں کو گر مقدم رکھ لیا جاتا

کبھی رنجش ہماری خاندانوں سے نہیں ہوتی

 

سمندر سے خفا ہو کر الٹ دیتی ہیں ہر ناؤ

ہوا کی دشمنی ان بادبانوں سے نہیں ہوتی

 

ترے دکھ نے بہت سارے دکھوں کو پال رکھا ہے

کہ اب راحت ، مجھے راحت کے گانوں سے نہیں ہوتی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ