اردوئے معلیٰ

Search

کس جسارت سے میں اس دل کا کروں حال رقم

میں کہاں اور کہاں میرے رسولِ اکرم

 

طاقِ ایماں میں درودوں نے جو روشن کئے ہیں

ان چراغوں کو کوئی کر نہ سکے گا مدھم

 

طالبِ چارہ ہوں اور اِذنِ سفر چاہتا ہوں

میرے زخموں کو اُسی در پہ ملیں گے مرہم

 

ہم خزاں میں بھی جو طیبہ سے پلٹ کر آئیں

رنگ وہ ہوتا ہے دیتے ہیں دعائیں موسم

 

ابر جب صلِ علیٰ پڑھ کے وہاں جھکتے ہیں

مینہ کی دربار پہ ہوتی ہے اجاگر ردھم

 

سبزگی چاہئے رحمت کی ترے گنبد سے

ہاتھ میں رکھیں گے ہم سبز ہلالی پرچم

 

لفظ جب آپکی عظمت کے رقم ہوتے ہیں

ہاتھ پر بوسے دیا کرتی ہے دستارِ قلم

 

سوئے دربارِ نبی چلئے اگر دیکھنا ہو

باغ میں کیسے بدلتا ہے یہ صحرائے قدم

 

صبح کے سینے میں اک نور کی لہر اٹھتی ہے

جب تصور میں چلا آئے تری زلف کا خم

 

نعت کا مصرعِ اول لگے کمخوابِ خیال

مصرعِ ثانی ہے تفہیم کا تاباں ریشم

 

سب کی شاہی و مسیحائی ترے حسن سے ہے

ماہِ کنعاں ہو سلیماں ہو یا ابنِ مریم

 

نعت سرور کے ہر اک شعر میں ہے کتنا بلیغ

لفظ کے جسم پہ معنی کا سنورتا ریشم

 

دھیان میں جب بھی ترا دشتِ عرب آتا ہے

تشنگی پر بھی برس جاتا ہےآبِ زم زم

 

صحنِ طیبہ میں کبھی بیٹھوں تو لگے یوں قسمت

جیسے سورج کی شعاعوں سے چمکتی شبنم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ