اردوئے معلیٰ

Search

کس گل کی اب ضرورت اے خاتمِ نبوّت !

کامل ہے تیری نکہت اے خاتمِ نبوّت !

 

ناسِخ تِری شریعت اے خاتمِ نبوّت

راسِخ تِری طریقت اے خاتمِ نبوّت

 

جب ناظِرِ خدا ہو عالَم میں جلوہ فرما

کیا شاہِدوں کی حاجت اے خاتمِ نبوّت؟

 

مُطلَق ہے حرفِ خاتم نَافی بُروز و ظِل کا

ہے فرق بے حقیقت اے خاتمِ نبوّت !

 

قصرِ پیمبری میں اِک اینٹ کی ہی جا تھی

پوری ہے اب عمارت اے خاتمِ نبوّت

 

در ” لا نبیَّ بَعدِی ” ، مَنفی ہے نکرہ ،یعنی

بس تو ہے تا قیامت اے خاتمِ نبوّت !

 

مرتدِّ قادیاں پر اور اس کے ہم زباں پر

سارے جہاں کی لعنت اے خاتمِ نبوّت

 

آلودۂِ نجاست جو وقتِ مرگ بھی تھا

وہ کب ہو ذی رسالت اے خاتمِ نبوّت !

 

تیغِ عتیق دے دو ! مہرِ علی کا صدقہ

احمد رضا کی ضَربت اے خاتمِ نبوّت !

 

کب سے تِرا معظمؔ فرقت میں جل رہا ہے

دے بھیج بادِ وصلت اے خاتمِ نبوّت !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ